شام کہیں لہرائی جاگی آنکھوں میں تنہائی جاگی پھر چمکے موتی اندر کے دریا کی ...

ہو جاۓ کہاں اس کی شروعات کا کیا ہے دل ہو تو محبت میں مقامات ...

اپنی وحشت سے جو ڈرتا ہی چلا جاتا ہے دل کے صحرا میں بکھرتا ہی ...

دستک دوں جس پہ شہر میں وہ در کوئی نہیں پھرتا ہوں کوچہ کوچہ مرا ...

پھول كھلاۓ كس نے اتنے ديۓ جلاۓ كس نے اتنے آنكھوں كو كچھ اور ہوس ...

پہاڑی راستے پر آبجو کی آزمائش ہے سمندر کس طرف ہے جستجو کی آزمائش ہے ...

دل کے شیش محل میں آنا تو کچھ ایسے آنا دھیرے دھیرے پاؤں دھرنا دھیمی ...

غزل اشفاق عامر ہے میرے خواب میں باغ جمال کی خوشبو یہیں سے اٹھتی ہے ...

غزل اشفاق عامر اپنی وحشت سے جو ڈرتا ہی چلا جاتا ہے دل کے صحرا ...

غزل اشفاق عامر کوئی منظر ہو آنکھوں کو بہت اچھا دکھاتا ہے محبت میں یہ ...