اے ری سوہنی

یہ تحریر 74 مرتبہ دیکھی گئی

اے ری سوہنی!
کہہ نا ہم کا
کون گھڑی ما
لاگی دلڑی
تمری اور مہینوال کی؟

اے ری سوہنی!
کون سمے ما
تورے منوا
پھوٹی بیل وصال کی
کاہے کھلڑے پھلوا مٹھڑے
جنکی جیہری خوشبو اترے
سانس ما روٹھڑے یار سی

اے ری سوہنی!
بول بے دردی
کاہے تورے من ما سوجھی
پہیلی دریا پار کی
کون سجھایا تم کا گوری
نیوں ماہی سنگ لا کے چوری
کچی مٹڑی گھڑا بنا کے
کاہے جندڑی رولی اپنی ؟
کہہ نا ہم کا اے ری سوہنی!

توری چھب پر چل نکلی میں
گھر ناری کہسار کی
کا کیو میں تورا سوہنی
کاہے موری کایا پلٹی

ڈال کے بئیاں، نیلی بنگڑی
اوڑھ کے چنری، سوئے رنگ کی
میں تو توری راہ پہ نکلی

اے ری سوہنی! دیکھ بے دردی
کاسے توری پہاڑی پجارن
جا کے دریا پونچھ ما ڈوبی

برکھا رت ملہار سے روٹھی
شام کا تارہ دیوے دہائی:
“اتہاس تو نے کا دہرائی
مار دیو اک سوہنی جائی “
کہہ نا ہم کا سوہنی جائی !
کون گھڑی ما
لاگی دلڑی
تمری اور مہینوال کی؟
کون سمے ما
تورے منوا
پھوٹی بیل وصال کی۔۔۔