ترا ذکر ہے وظیفہ، تری یاد نوکری ہے ترے عشق کی فقیری ہی بڑی توانگری ...

پتّے کا تن سبز ہوا ہے، پھول نے خوشبو پا لی ہے خون لگا سارا ...

رات پڑی ہے صبح میں کل کی، ہجر سہیں یا سو جائیں عیاری کا خول ...