غزل

یہ تحریر 1099 مرتبہ دیکھی گئی

اس کو جیون۔۔۔۔ کی کیا سمجھ آ ئے
جو۔۔۔ کھلونوں سے دل کو بہلائے

ہائے وہ آ نکھیں پیاری آ نکھیں وہ
جن کو دیکھیں تو بھوک مٹ جائے

اس کو پہنچی ۔۔۔۔خبر جنازے کی
کیا پتا آ ج۔۔۔۔۔۔ وہ چلا آ ئے

یاد کرتے ہیں۔۔ آ ج بھی جاناں
تیری زلفوں کے وہ گھنے سائے

موت اک آ ئینہ ہے حیرت کا
جستجو موت سے کیوں گھبرائے

دل دیا ہے۔۔ دیار ظلمت کا
یہ ۔۔۔۔دیا ٹمٹماتا ہی جائے

دین افضل ہے بھوک ہے پہلے
کوئی۔۔ واعظ کو آ کے سمجھائے