غزل

یہ تحریر 208 مرتبہ دیکھی گئی

o

تو ہے غزالِ شب مرے باغِ ختن میں آ
پھر سے اسی غرور اسی بانکپن میں آ

پھر سے ورود کر کبھی اے آتشِ قدیم
اے شعلہء وصال مرے جان و تن میں آ

پھر ہو نمودِ جلوہ لباسِ حریر میں
پھر سے اسی لباسِ شکن در شکن میں آ

پھر سے بپا کریں کوئی ہنگامہئ غزل
اے غنچہء صدا مرے باغِ سخن میں آ

کچھ دن قیام کر مرے خواب و خیال میں
اے دور کے مکیں کبھی میرے وطن میں آ