بھوک، ساحل پر دم توڑتے کُتے کی ہِچکی سے جنگل میں دانت کِچکِچاتے ہائناز کی ...

ویلے نوں صد کس ماریا اے ہ………… ہ…………. ہ…………ہ ۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔ ویلے دی ...

شام درِ وجود پہ دستک دیے جا رہی ہے دُھند کا مٹیالا جال وقت کا ...

جب وہ لہجہ خمار سے بھر جائے دل، نظر اعتبار سے بھر جائے کس کو ...

آخری شام ہے دسمبر کی، سُرمئی بےدلی کے پہرے میں درد کی خشک شاخ سے ...

تجھ سا ترا خیال مرے ساتھ ساتھ تھا شہر شب وصال مرے ساتھ ساتھ تھا ...

کوئی یقین کرے نا کرے یہی سچ ہے جو دل کے غار سے پھوٹی وہ ...

۔۔۔۔۔۔ آنکھیں چھت میں گڑی رہیں گی۔ اندھا کمرہ، تنہائی کے سلکی لمس میں کھع ...

دھوپ دریا کے اس پار ہے اور کشتی اس کنارے پانی کسی کا طرف دار ...

ہوند دی انھی سراں دے ویہڑے ساہواں دی بیری نال اَڑی جان دی گڈی ایانے ...