غزل

یہ تحریر 401 مرتبہ دیکھی گئی

ہے  کسمسایا  کوئی  انتخاب  آنکھوں  میں

یا  جھلملایا  نیا  اک سراب آنکھوں میں 

بکھرنے  پائے  نہ  جو  آنسووں  میں  ڈھلنے  پائے

اُتر رہے  بڑی  حسرت  سے خواب آنکھوں میں

کسی  پلک  نے  نہیں  پلٹا اِک وَرَق  اس کا

دھری  رہی  مِرے  دِل  کی  کتاب آنکھوں میں

اُٹھے  جہانِ محبت  سے  ہم  تو  خالی  ہاتھ

غُبار  دِل  میں  نہیں  تھا  ،  نہ  آب  آنکھوں میں

ہوا  کا  تھا  یہ  تساہل  یا  وہ ہی  غافِل  تھا

کھِلے  بھی،  مہکے  بھی  ،  کتنے  گُلاب آنکھوں میں

زباں پہ  آ کے رہی  حرفِ شوق  کی  تفصیل 

جھلکتا لاکھ تھا لب، لباب  آنکھوں میں

لبوں پہ جب بھی  خموشی  کے قُفل ڈالے گئے

نئے  کُھلے  ہیں  تکلم  کے باب  آنکھوں میں

حریمِ دِل  کا  جو اِحساں  اُٹھا  نہیں  سکتے

ٹھہر گئے  ہیں  وہ سارے عذاب آنکھوں میں

بڑے  جتن  سے  نکالا  تھا  جس کو دِل سے کبھی

وہ آ کے بس گیا ،خانہ  خراب ،آنکھوں میں

لبوں سے پِھسلے پڑے ہیں اِدھر تو شِکوے نئے

اُدھر گڑے ہیں پُرانے حِساب آنکھوں میں

لگائی اُس نے عدالت کبھی نہ لفظوں کی

رکھا حسابِ گنا ہ وثوابآنکھوں میں

مِلا تھا کل وہ جُدائی  کی دھوپ اوڑھے ہوئے

نہیں تھی سامنا کرنے کی تاب آنکھوں میں

لرز رہے تھے  لبوں پر گُلاب سُوکھے ہوئے

چھلک  رہی تھی پُرانی شراب آنکھوں میں

مَچَل کے رہ گئی معصوم سی کوئی خواہش

سِمَٹ  کے آ رہا سارا حِجاب آنکھوں میں

مُکالَمے  تھے عَجَب خود کفیل اُن سے زُبیر

سَوال آنکھوں سے تھے اور جواب آنکھوں میں