سنا ہے دل محبت میں بہت رسوائی سہتا ہے سنا ہے آنکھ روتی ہے تو ...

O بس اب یہی ہے کہ سب کچھ جلا کے رکھ دیا جائے پھر اِس ...

گری یہ اوس کہ بوسے جھڑے درختوں سے روا نہ تھا کہ صبا یوں لڑے ...

کہیں پہ دور افتادہ کسی چھوٹے سے قصبے کے بہت سنسان اسٹیشن پہ رک جانا ...

دیر ہو گئی ہے کیا؟ سوجھتا نہیں کچھ بھی سامنے خلا سا ہے پشت پر ...

ہم نے تم سے پیار نبھایا تم نے ہمیں بدنام کیا ہم نے مہر محبت ...

(1) مشرقی معاشرے میں شادی کے بارے میں بہت سی باتیں کی جاتی ہیں۔ شاید ...

حکیم الامت ڈاکٹر مولانا سید قلب صادق کی نذر گل تھیں جو شمعیں انہیں تو ...

حیرتوں کا باب مجھ پر منکشف ہونے کو ہے ہونے کی تکرار میں کچھ مختلف ...

شفق مزاج کبھی مطلع,سحر کی طرح ملا ہے رزق,سخن بھی تری نظر کی طرح اسے ...