۱۴ مارچ کی شام کچھ عجیب سی تھی۔ پُراسرار سی۔ چپ چاپ سی۔ دل کہہ ...

”مکرمی! آپ کے مؤقر اخبار کے ذریعے میں متعلقہ حکام کو شہر کے مغربی علاقے ...

ایک آواز، دور کی آواز میری تنہائی سے لپٹتی ہے میرے خوابوں میں سرسراتی ہے ...

اے زباں اپنے کہے کو بھی نہ اپنا فن سمجھ غیب سے سُن کر سناتی ...

فکشن میں ہر کہانی کار کا، کہانی بیان کرنے کا، اپنا طریقہ ہوتا ہے۔اس اٹکل ...

(۳)             علمیاتی تعبیر(۱)             اب اسی شعر کو ترقی پسند نظریے کی روشنی میں ...

پتا نہیں کیوں ”باسودے کی مریم“ پر لکھتے ہوئے کسی بھی تنقیدی اصطلاح کا استعمال ...

عشرتِ دل غمِ الفت ہے تمھیں کیا معلوم اس میں جو درد کی لزت ہے ...

اے سمندری پرندو انہی سبز ساحلوں سے کبھی تم آڑے سفر پر کبھی ہم سفر ...

O بھیگی بھیگی ابرِ غم کی اک ردا سی دل میں ہے آنکھ تک آتی ...