زوال وحشتیں کرتا ہے غل مچاتا ہے صدا کا قحط مگر ہے کہ بڑھتا جاتا ...

کل رات انتظار حسین کو خواب میں دیکھا۔ جاگتی آنکھوں کا خواب بند آنکھوں کے ...

ہم اس مشترکہ نیند سے کبھی نہیں جاگے جس کے لیے ہم دونوں نے یکساں ...

تئیسویں کہانی: طبیب جسم و روح یعنی وحید العصر کی کہانی:: پیشےکےلحاظ سےڈاکٹر،شوق و عمل ...

جنگ چھوٹی ہو یا بڑی اس کے مقاصد تھوڑے فرق کے ساتھ ایک جیسے ہوتے ...

چاند جب خواب کے ہیجان سے بھر جائے گا راستہ جھیل کا پانی میں اتر ...

بائیسویں کہانی: نصف صدی کاقصہ-میرے تدریسی سفر کا آغاز : کہانی کا آغاز میں سوانحی ...

حال کی کھڑکیوں سے لمحۂ موجود ہمدمِ دیرینہ، میرے محروم ماضی! تمہاری یاد عذاب سہی ...

میر،بورخیس اور شطرنج (شمس الرحمن فاروقی کی یاد میں) میر کے دو شعروں میں شطرنج ...

“اچھا! رک جاو میں گھر سے باہر چلا جاتا ہوں” والد صاحب نے یہ کہتے ...