کُہر

یہ تحریر 102 مرتبہ دیکھی گئی

آخری شام ہے دسمبر کی،
سُرمئی بےدلی کے پہرے میں
درد کی خشک شاخ سے اُلجھی
سِسکیاں لے رہی ہے بادِشمال

شہر کی کم سواد گلیوں سے
سہم کے بے اماں پڑاو تک
ہرطرف خیمہ زن ہے تنہائی

درد کا لازمان پھیلاؤ،
ریت پر رینگتے ہُوئے سائے
جِس طرح راکھ ڈال جاتا ہے
وقت دوشیزگی کے بالوں میں

کُہر ہی کُہر ہے خیالوں میں