غزل

یہ تحریر 967 مرتبہ دیکھی گئی

پاس  سے  جب  بھی  وہ  گُزرتی  تھی 

دِل  کی  دھڑکن  اِدھر  اُدھرتی  تھی 

ہنس  ہنسا  کر  وہ  دِل  کی  میٹھی  بات

چاہتی  جب  بھی  ،  کہہ  مُکرتی  تھی 

مَیں  بُرا  تھا  ،  بھلا  تھا  ،  جیسا  تھا

ایسی  باتوں  سے  درگزرتی  تھی 

راحت  افزا  سمجھتا مَیں  جو  بات 

وہ   اُسی   بات   پر   بِپھرتی   تھی

اپنی  بے  چینی  کا  سبب خُود  تھی 

لیکن  اِلزام  مُجھ  پہ  دھرتی  تھی 

بدمِزاجی  کمال  بگڑی  ہوئی 

صرف  میرے  لیے  سُدھرتی   تھی 

جستجو  بھی  نہ  کی  مِری  اُس  نے

مُجھے  کھونے  سے  بھی  وہ  ڈرتی  تھی 

کاسنی  کُرتی  زیبِ  تن   کر  کے 

خیمہِ  جاں  میں  پاؤں  دھرتی  تھی

پھول  ،  بِجلی  ،  دھنک  ،  ستارے  ،  چاند

اُس  کی  تصویر  سی  اُبھرتی  تھی