غزل

یہ تحریر 103 مرتبہ دیکھی گئی

لفظوں  کی  پُختگی  کا  بھی  ساماں  رہا  ہوں  مَیں

لہجے  کی  لرزشوں  میں  بھی  پِنہاں  رہا ہوں مَیں

مَیں  تیری  تمکنت  سے  رہا  ہوں  یوں  مُنسلک

تیری  عنایتوں  کا  بھی  اِمکاں رہا ہوں مَیں

مَیں تیری  رِقّتوں  کے  پسِ پردہ تھا  کبھی

تیرے  تبسّموں  کے  بھی  شایاں رہا ہوں مَیں

مَیں  تیرے  اِلتِفات  کی  توسیع  تھا  کبھی

با معنی  سرد  مِہری  کا  عنواں رہا ہوں مَیں

مَیں تیری  کِس  کمی  کی  تلافی  تھا  اُن  دِنوں

اپنی  شناخت  کے  لیے  کوشاں رہا ہوں مَیں

لائق  سزا   کے  ہوں  یا  سزاوار  لُطف  کے 

تیرے  طفیل  سب  میں  نمایاں رہا ہوں مَیں

کُچھ  دیر  کے  لیے  ہی  اگرچہ  قِیام  تھا

دِل  میں  تمھارے  ،  مانو  ،  مِری  جاں،رہا ہوں مَیں

ڈوری  تھی  ریشمی  یا  وہ  چُوڑی  تھی  کانچ کی 

جِس  شکل  میں  سہی،   تیرا  پیماں رہا ہوں مَیں

تُجھ  کو  میں  یہ  بتا  دوں  کہ  تیری  ہی  چاہ  میں 

اِک  عرصہ  اپنے    آپ  سے  نالاں رہا ہوں مَیں

تفتیش  ہو  تو  خلقِ خُدا  بھی  ہو  فِکرمند

تُجھ  سے  بِچھڑ  کے  اِتنا  پریشاں رہا ہوں مَیں

مُجھ    کو    پروں    کے   جلنے    کا    دھڑکا    لگا    رہا 

تُجھ  کو  گُماں  یہ  ہے  کہ  گریزاں رہا ہوں مَیں

اِک  جُنبشِ طلب  پہ  سبھی  کُچھ  تھا  لا  دھرا

اِتنا  بھی  ایک  دَور میں  ارزاں رہا ہوں مَیں

اِک  سروقد  نے  تو  سبھی  کَس  بَل  دِیے  نکال

کُچھ  وقت  اسیرِ کاکلِ پیچاں رہا ہوں مَیں

اب  صبر  شُکر  کر  کے  بظاہر  ہوں  مطمئِن

پہلے  تو  ایک  دَم  سے  ہراساں رہا ہوں مَیں

آج  اُس  پہ اپنے  آپ  سے  شرمندہ  ہوں  ،  زُبیرؔ

کَل  تک  جِس  ایک  بات  پہ نازاں رہا ہوں مَیں

ڈاکٹر محمد زبیر خالد کی دیگر تحریریں