غزل

یہ تحریر 1219 مرتبہ دیکھی گئی

لاج   کی   لالی   نین   کنول   میں   رہتی  تھی

ایک  لڑائی  جل   ،   کاجل  میں  رہتی  تھی

روپ   کا   بادل   اُمڈ   اُمڈ   کے   برستا   تھا

ایک  چھلک  سی  من  چھاگل  میں  رہتی  تھی

جیسے  بھی  ہو ،  اُن   زلفوں  سے  تو  رہائی  ملے

سوچ  یہ  جذبوں  کی  دلدل  میں  رہتی  تھی 

 سیدھے  سادے  سپاٹ  سے  چہرے والی  تھی 

میری  غزل  کے  رنگ  محل  میں  رہتی  تھی 

مُجھ  چُپ  چاپ  سے  ڈانڈے  اُس  کے  مِلتے  ہی 

ہلچل   اُس   میں   ،   وہ   ہلچل   میں   رہتی   تھی 

روشنی   وہ   تو   چھن  چھن   باہر    آتی    تھی 

جسے   چُھپائے    وہ   ململ   میں   رہتی   تھی

دُکھ  کو  وہ  مُسکان  اوڑھائے  رکھتی  تھی

اور  ہنسی  تو  جنگ  وجدل  میں  رہتی  تھی

دِل  کی  بات  جتا  کر  بھی  نہ  جتاتی  تھی

نشّا چھلکتا  ،  مے  بوتل  میں  رہتی  تھی

میرے   خلاف   وہ   منصوبہ   تو    بنا    لیتی

پِھر  مصروف  وہ   ردّ و بدل  میں  رہتی  تھی

میں  جسے  سمجھا  تھا  کہ  وہ  میرے  ہاتھ  میں  ہے

وہ   تو   لکیروں   کے    جنگل   میں   رہتی   تھی 

ہر    کوئی   پِھرتا   تھا   اُس   کے   چکّر   میں 

لیکن   وہ   اپنے   کس  بل   میں   رہتی   تھی 

میرے   پیار   کا   لہجہ  گزشتہ   کل   کا   تھا 

  وہ   لڑکی   آئندہ   کل   میں   رہتی  تھی 

کوئی  کمی  سی  بدل  گئی  تھی  اُس  کا   مزاج

بحرِ رجز  تھی   ،   بحرِ رمل  میں   رہتی  تھی 

اَمرتی  جیسی  چکّر دار  مِٹھاس  اُس  کے 

کڑوے  لفظوں  کی  بُکّل  میں  رہتی  تھی

تپتی  دُھوپ  میں  ٹھنڈی  ہوا  کا  جھونکا  تھی

دُھوپ  کی  دیوی  تھی  ،  جل  تھل  میں  رہتی  تھی

دِل  میں  گِرہ  پڑنے  کا   ،   زبیر ،   ملال  نہ  تھا

ایک   گِرہ   جو   اُس   آنچل   میں   رہتی  تھی