جوابِ دعوٰی (معریٰ نظم)

یہ تحریر 815 مرتبہ دیکھی گئی

تُم    جو  کہتی  ہو   ،    ْ  بات   کچھ  بھی  نہیں ،

 باہمی   واردات      کچھ  بھی  نہیں     ٗ

 اک   ذرا     یہ   خود   آزمائی     کرو   :  

پاس  سے  میرے  گر  کبھی   گزرو              

پُوچھ   کر   دھڑکنوں   سے   بتلاؤ

                                                              صورت ِ حال   اصل  میں  کیا   ہے ؟

دیکھتا    مُجھ   کو   پاؤ   اپنی   طرف 

ہاتھ   پیشانی    پر    مَلو    تو    سہی  

گر    نمی    پاؤ    تو   یہ   سوچو   ذرا

بات   کُچھ   ہے   یا    بات  کُچھ   بھی   نہیں  ؟

                                                                               اِک  ذرا   مَیں   جو   تُم   سے  بات   کروں  

                                                                                لاکھ   نخوَت  ،   ہزار   ضبط   سے   بھی 

                                                                                 تُم   کلی   کی  طرح   کھِل   اُٹھتی   ہو

                                                                                مان  لو  اب  کہ   بات   کُچھ   تو    ہے

دیر   تک   مَیں   نظر   نہ  آؤں   تو  

بے  قراری  تمھاری   چُھپتی   نہیں

سارے   کیمپس   میں  ڈھونڈتی   ہو   مُجھے

پِھر  بھی  کہتی   ہو     ،     ْ بات   کچھ  بھی  نہیں    ٗ

ْ  باہمی   واردات     کچھ  بھی  نہیں      ٗ خیر   ،   کہنے   میں   ہرج   ہی   کیا   ہے  ؟