حیرتوں کا باب مجھ پر منکشف ہونے کو ہے ہونے کی تکرار میں کچھ مختلف ...

ہر شہر کے بیچ سے ایک دریا گزرتا ہے جیسے جسم کے بیچ سے شہ ...