دُکھ کڑی مُسافت کا راستوں کو کیا معلوم منزلوں پہ کیا گُزری فاصلوں کو کیا ...

دلِ خوش خواب ہے گُزرے زمانوں میں کہ تم ہو زرِ کم یاب ہے اِن ...

کِس کو ملنی ہے یہاں کس پہ فضیلت نہیں طے سَر کو رہنا ہے کہ ...

ہَم سے نالاں بھی وہ رہتے ہیں بِچھڑتے بھی نہیں ہَم سَفرَ اَور کوئی راہ ...

مال و مَنال بھی رہا جامِ سِفال بھی رہا دَستِ کِرشمہ ساز میں، اور ملال ...

شورِ اَوراقِ خِزانی کوئی سُنتا ہی نہیں میں سُناتا ہُوں کہانی کوئی سُنتا ہی نہیں ...