غزل

یہ تحریر 79 مرتبہ دیکھی گئی

دلِ خوش خواب ہے گُزرے زمانوں میں کہ تم ہو
زرِ کم یاب ہے اِن خاک دانوں میں کہ تُم ہو

لیے جاتا ہے نامعلوم منزل کی طرف کون
ہَوا ہے اپنے خستہ بادبانوں میں کہ تُم ہو

یہ کیا اَسرار ہے یہ کون ڈھوٖنڈے ہے کسی کو
مِری آواز ہے خالی مکانوں میں کہ تُم ہو

ِنکل آئے کِسی قیدِ مکان و لامکاں سے
نہیں کوئی ہم ایسے سخت جانوں میں کہ تُم ہو

کوئی آواز دیتا ہے رہِ آیندگاں سے
محبت مُنتظِر اگلے جہانوں میں کہ تُم ہو