غزل

یہ تحریر 82 مرتبہ دیکھی گئی

عشرتِ دل غمِ الفت ہے تمھیں کیا معلوم
اس میں جو درد کی لزت ہے تمھیں کیا معلوم
ہجر ہی میں سے ابھر آئے خدوخالِ وصال
یہی عرفانِ محبت ہے تمھیں کیا معلوم
اب تو میرا دلِ پرُ زخم مری نظروں میں
ایک گلزارِ مسرت ہے تمھیں کیا معلوم
اس اندھیرے میں ہی جلتا ہے عقیدت کا چراغ
شبِ غم سایہء رحمت ہے تمھیں کیا معلوم
غم کی پتھریلی زمیں سے وہ ابلتا ہوا زخم
آج سر چشمہء راحت ہے تمھیں کیا معلوم
وصل کی ساعتِ شاداب سے بھی رنگیں تر
میرا ہر لمحہء فرقت ہے تمھیں کیا معلوم
ابرِ غم دیدہء نم سوزوگدازِ پیہم
ان فضاؤں میں جو فرحت ہے تمھیں کیا معلوم
در و دیوار سے جل اُٹھتے ہیں رحمت کے چراغ
سوزِ غم میں وہ کرامت ہے تمھیں کیا معلوم
وہ جو تھا یاس کا افسردہ سکوت آج وہی
گلشنِ حرف و حکایت ہے تمھیں کیا معلوم
وہ غمِ عشق کے صحرا کا سرابِ حسرت
آج تسنیمِ مسرت ہے تمھیں کیا معلوم
حسن کیا شے ہے مشیّت کو مسخر کر لے
جزبہء دل میں وہ قدرت ہے تمھیں کیا معلوم

بدری پرشاد شِنگلو کی دیگر تحریریں