غزل

یہ تحریر 72 مرتبہ دیکھی گئی

دل وسوسوں میں اِس طرح اُلجھا ہوا لگا

یہ آئینہ غبار میں لپٹا ہوا لگا

غفلت کدے میں دہر کے کی سیر چار سُو

جو بھی ملا وہ نیند میں چلتا ہوا لگا

تاروں پہ بھی غنودگی چھائی ہوئی لگی

پچھلے پہر کا چاند بھی سویا ہوا لگا

ہم کارواں سمجھ کے ادھر آ گئے مگر

ہر شخص اِس ہجوم کا بچھڑا ہوا لگا