غزل

یہ تحریر 80 مرتبہ دیکھی گئی

ہَم سے نالاں بھی وہ رہتے ہیں بِچھڑتے بھی نہیں
ہَم سَفرَ اَور کوئی راہ پکڑتے بھی نہیں

رَکھنے والے نے عَجَب ڈھنگ سے رکھا ہے ہمیں
سَبز ہوتے بھی نہیں شاخ سے جَھڑتے بھی نہیں

بے بسی میں خس و خاشاک سے بڑھ کر ہوئے ہم
باڑ آتی ہے تو بہ جاتے ہیں اَڑتے بھی نہیں

خاک کر دے گا ہمیں تیری زمینوں کا طِلِسم
شَوقِ پرواز بھی ہے پیر اُکھڑتے بھی نہیں

کُچھ اَزَل سے مِرا قریہ بھی تھا ویرانہ سَرِشت
اَور بَسنے کے لِیے شہر اُجڑتے بھی نہیں

اَب فَقَط آپ کے دیوانوں پہ ہَنستے ہیں عدو
اَب وہ پسپا بھی نہیں ہوتے ہیں لڑتے بھی نہیں