غزل

یہ تحریر 78 مرتبہ دیکھی گئی

کسی کے باغِ بدن سے چرا کے لائی ہے
ہوا یہ پھول کہاں سے اٹھا کے لائی ہے
وہ ایک لہر جو اٹھتی ہے دل میں تیرے لیے
گہر بہت طرفِ جاں بہا کے لائی ہے
مجھے کیا تو اُسی شمع نے کیا روشن
جو اپنی لو کو ہوا سے بچا کے لائی ہے
گیا جو روٹھ کے تو اور کوئی کیا لاتا
خزاں ہی موسمِ گل کو منا کے لائی ہے
ترے حضور مری جاں یہ شمعِ عشق مجھے
دیارِ ماہ وشاں میں گھما کے لائی ہے
ہوا کے خوف سے یہ روشنی ہمارے لیے
چراغ لائی ہے لیکن بجھا کے لائی ہے
مہ و ستارہ و گل، دیکھ میری طبعِ رواں
سخن کے طشت میں کیا کیا سجا کے لائی ہے
یہی ہوا جو یہ طوفاں اٹھا رہی ہے، مجھے
گرفتِ موجِ بلا سے چھڑا کے لائی ہے
کل اُس کے خانہء تن میں انیس آنکھ مری
مجھے بہشت کے منظر دکھا کے لائی ہے