غزل

یہ تحریر 49 مرتبہ دیکھی گئی

دُعا کی دَسَتکوں سے وَا نہ ہوں گے دَر ابھی اور
لَبِ دَریا کَٹیں گے سَرکشوں کے سَر ابھی اور

وُہی صحرا، وُہی اُجڑی ہوئی بستی وہی خاک
سَرِ محضر بَنیں گے آگ سے مَنظَر اَبھی اور

قیامت ہے چچا عبّاسؑ کا جانا بھی لیکن
بپا ہوں گے سُکَینّہ! سینکڑوں محشَر ابھی اور

نہیں انجام پایا کاروبارِ آتش و خاک
جلے گا عابِدِ بیمار کا بِستَر ابھی اور

ابھی تو کُلفتیں آغاز ہونا ہیں پسِ عصر
بُہت دہکیں گے اَوجِ شام پر خاور ابھی اور

پڑیں گی مُشکلیں کتنی ابھی قلب و نَظَر پر
رہیں گے کب تلک بے چارگاں مُضطَر ابھی اور

سلامی پر کُھلیں لَفظ و معانی کے نئے در
قلم تَرسے گا کب تک سِبطِؑ پیغمبر، ابھی اور