غزل

یہ تحریر 59 مرتبہ دیکھی گئی

مَرحلہ لَوٹ کے آتا ہے وہی سَم جیسا
عِشق پُرکار و پُر اَسرار ہے سَرگم جیسا

اَے خَوش آثار تِرے وَصل کی شَب یہ بھی نہیں
ہے سرِ شام کا سایہ شبِ ماتم جیسا

گر نہیں کاہِشِ ایّام کا درماں، نہ سہی
چارہ گر کرتے سُخن ہی کوئی مرہم جیسا

جانتا تھا نہیں مُہلت تو یہ جوہر تُو نے
خاک رکھا مِری مِٹیّ میں نَمِ غم جیسا

گردشِ جام! کہیں پِھر ِمری باری تو نہیں
ذائقہ نوکِ زباں پر ہے وُہی سَم جیسا

محضرِ شوق پہ ہے مُہلتِ اِمرُوز فقط
کل کے وعدے سے بہلتا ہے کوئی ہم جیسا