دونوں میں تیسرا وہ

یہ تحریر 145 مرتبہ دیکھی گئی

”نفلوں کی نیّتیں کر
الحاج بن کہ منشی
بے شک، اگر تو خوش ہے
سیندھیں لگا گھروں میں
انگلی کو استرا کر
جیبیں کتر، ہنرور
یا بے ہنر، یہ تیری
اپنی رضا ہے پیارے!“

شاموں میں شام تھی وہ
قبروں کے نام تھی وہ
قبروں کے کچھ مجاور
کچھ دور کے مسافر
مَیں اور آپ دونوں
دونوں میں تیسرا، وہ
کچھ دیر چپ رہا، پھر
بولا: ”مگر یہ دُنیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔!“

بولا: ”اگر یہ دُنیا
ہم کو نہ کچھ کہے تو
ہم بھی اسے نہ چھیڑیں!“